نماز میں آہستہ آمین کہنے کاثبوت، احمد القادری مصباحی

نماز میں آہستہ آمین کہنے کا ثبوت
ازاحمد القادری مصباحی

نماز میں آہستہ آمین کہنا سنت، اوررسول ﷲ ﷺ کے حکم کے مطابق ہے۔ آہستہ آمین کہنے کے سلسلے میں، متعدد احادیث آئی ہیں۔
{۱} حضرت وائل بن حجر رضی اللہ تعالٰی عنہ سے روایت ہے۔
عن وائل ابن حجر( رضی اللہ تعالٰی عنہ )انہ صلے مع النبی صلی اللہ علیہ وسلم فلما بلغ غیر المغضوب علیھم ولا الضالین قال اٰمین و اخفیٰ بھا صوتہ۔
(۱۔امام احمد، ۲۔ابوداؤدطیالسی، ۳۔ابویعلی موصلی، ۴۔طبرانی،۵۔ دارقطنی، ۶۔مستدرک للحاکم )
حضرت وائل بن حجر رضی اللہ تعالٰی عنہ نے نبی ﷺ کے ساتھ نماز پڑھی۔ جب حضور (ﷺ ) غیر المغضوب علیہم ولا الضالین ، پر پہنچے تو آپ نے آمین کہا،اور آمین میں ،اپنی آواز آہستہ رکھی۔
{۲} حضرت وائل ابن حجر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے دوسری روایت ہے۔
قال سمعت رسول اللہ ﷺ قرا غیر المغضوب علیہم ولا الضالین فقال اٰمین و خفض بہٖ صو تہٗ ،
(۷۔ابوداؤد، ۷۔ترمذی،۸۔ ابن ابی شیبہ )
فرما تے ہیں کہ میں نے رسول اللہ ﷺ کو سنا کہ آپ نے غیر المغضوب علیہم ولا الضالین پڑھاتو آمین کہا ، اور آواز آہستہ رکھی۔
ان دونوں حدیثوں سےمعلوم ہوا ،کہ آمین، آہستہ کہنا ، رسول اللہ ﷺ کی سنت ہے۔
{۳} حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روا یت ہے ۔
قال رسول اللہ ﷺ اذا امن الامام فامنوا، فانہ ما وافق تا مینہ تامین الملٰئکۃ،غفر لہٗ ما تقدم من ذنبہ ۔
(۹۔بخاری،۱۰۔مسلم،۱۱۔احمد،۱۲۔مالک، ۱۳۔ابوداؤ، ۱۴۔ترمذی، ۱۵۔نسائی، ۱۶۔ابن ماجہ )
رسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایا ،کہ جب امام آمین کہے، تو تم بھی آمین کہو، کیونکہ جس کی آمین فرشتوں کی آمین کے موافق ہوگی ، اس کے گذشتہ گناہ بخش دیئے جائیں گے۔
اس حدیث سے معلوم ہوا کہ گناہ کی معافی ،اس نمازی کے لئے ہے جس کی آمین فرشتوں کی آمین کی طرح ہو ۔ فرشتے آمین آہستہ کہتے ہیں اور ہم نے ان کی آ مین آج تک نہیں سنی، تو چاہئے کہ ہماری آمین بھی آہستہ ہو، تاکہ فرشتوں کی موافقت اور گناہوںکی معافی ہو۔
{۴} حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے دوسری روایت ہے۔
قال رسول اللہ ﷺ اذا قال الا مام غَیْرِالْمَغْضُوْبِ عَلَیْھِمْ وَلاَ الضَّآ لِّیْنَ ، {فقولوا اٰمِیْن } فانہٗ من وافق قولہٗ ،قول الملٰئکۃ ،غفر لہٗ ما تقدم من ذنبہ،
(۱۷۔بخاری، ۱۸۔شافعی، ۱۹۔مالک، ۲۰۔ابوداؤد، ۲۱۔نسائی )
رسول اللہ ﷺ نے فرمایا ،کہ جب امام ،
غَیْرِالْمَغْضُوْبِ عَلَیْھِمْ وَلاَ الضَّآلِّیْن۔
کہے تو تم اٰمِیْن کہو، کیونکہ جس کا یہ اٰمِیْن کہنا فرشتوں کی اٰمِیْن کہنے کے مطابق ہوگا، اس کے گناہ بخش دیئے جا ئیں گے۔
اس حدیث سے دو مسئلے معلوم ہوئے۔ ایک یہ کہ مقتدی امام کے پیچھے سورہ فاتحہ ہر گز نہ پڑھے۔ اگر مقتدی کا پڑھنا صحیح ہو تا، تو ہمارے پیارے نبی، رؤف و رحیم ﷺ یوں فرماتے ،کہ جب تم وَلَا الضَّالِّیْن کہو، تو آمین کہو۔معلوم ہوا کہ مقتدی صرف آمین کہیں گے۔سورہ فاتحہ پڑھنا،اور وَلَا الضَّالِّیْن کہنا امام کا کام ہے، مقتدی کا نہیں، بلکہ مقتدی پر قرآن کا سننا اور چپ رہنا واجب ہے۔
اللہ عزوجل ارشاد فرماتاہے۔
وَاِذَاقُرِیَٔ الْقُرْ اٰ نُ فَا سْتَمِعُوْا لَہٗ وَاَنْصِتُوْ لَعَلَّکُمْ تُرْحَمُوْنَ۔
اور جب قرآن پڑھا جائے تو اسے کان لگاکر سنو اور خاموش رہوکہ تم پر رحم ہو۔
( کنز الایمان، سورہ اعراف، آیت۲۰۴)
دوسرامسئلہ اس حدیث سے یہ معلوم ہو ا کہ اٰمِیْن آہستہ ہونی چاہئے کیونکہ فرشتوں کی اٰمِیْن آہستہ ہی ہوتی ہے جیسا کہ اوپر گزرا۔
{۵} حضرت وائل ابن حجر رضی اللہ تعالٰی عنہ نے نے فرمایا۔
لم یکن عمر و علی رضی اللہ عنھما یجھر ان ببسم اللہ الرحمٰن الرحیم ولا باٰمین۔
(۲۲۔ تہذیب الآثارللطبرانی ،۲۳۔ طحاوی )
حضرت عمر و علی رضی اللہ تعالٰی عنہما نہ تو بِسْمِ ﷲِالرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمْ اونچی آواز سے پڑھتے تھے، نہ آمین۔
{۶} حضرت ابو معمر رضی اللہ تعالٰی عنہ سے روایت ہے ۔
عن عمر ابن الخطاب رضی اللہ تعالٰی عنہ قال یخفی الامام اربعاً ، التعوذ و بسم اللہ و اٰمین و ربنا لک الحمد۔
(۲۴۔عینی)
حضرت عمر رضی اللہ تعالٰی عنہ نے فرمایا امام چار چیزیں آہستہ کہے۔ اَعُوْذُ بِاللہ، بِسْمِ اللہ،آمِیْن اور رَبَّنَا لَکَ الْحَمْد۔
معلوم ہوا کہ آمین آہستہ کہنا ،سنت ِصحابہ اور سنت ِخلفاء راشدین بھی ہے۔
{۷} امام ابو حنیفہ رضی اللہ تعالٰی عنہ نے ،اپنے استاذ، حضرت حماد رضی اللہ تعالٰی عنہ سے، انھوں نے اپنے استاذ،حضرت ابراہیم نخعی رضی اللہ تعالٰی عنہ سے روایت کیا۔
قال اربع یخفیھن الامام، التعوذ، و بسم اللہ، و سبحنک اللھم، و اٰمین ،
(۲۵۔ رواہ محمد فی الا ثار، ۲۶۔ وعبد الرزاق فی مصنفہ)
آپ نے فرمایا، کہ امام چار چیزیں آہستہ کہے ،
اَعُوْذُ بِاللّٰہ، بِسْمِ اللّٰہ، سُبْحَانَکَ اللّٰہُمَّ اور آمِیْن۔
(یہ حدیث امام محمد نے آثار میں، اورامام عبد الرزاق نے اپنی مُصَنَّفْ میں بیان کی)
معلوم ہواکہ جیسے ثنا، اعوذ باﷲ، بسم اﷲ، رکوع اور سجدے کی تسبیحات، التحیات، درود ابراہیمی، دعائِ ماثورہ وغیرہ سب آہستہ پڑھی جاتی ہیں ایسے ہی آمین بھی آہستہ پڑھنا سنت ہے ۔یہی احادیث ِصحیحہ اور صحابہ کرام رضی اللہ تعالٰی عنہم کے اعمال واقوال سے ثابت ہے۔
یہی امام اعظم ابو حنیفہ رحمۃاﷲ علیہ کا بھی قول ہے ۔
امام اعظم ا بو حنیفہ رحمۃﷲ علیہ، جلیل القدر امام، تا بعی،فقیہ، عالم، محقق،مدقق، متقی،محدث ، مفسر،مجتہد،صالح،صاحب کشف اور ولی کامل ہیں،نہ ان کے زمانہ میں ان کے برابر کوئی فقیہ تھا نہ اُن کے بعد اب تک اُ ن کے مثل پیدا ہوا۔ بلا شبہ آپ اِمَامُ الْمُتَّقِیْنْ اور اَمِیْرُ الْمُسْلِمِیْنْ ہیں۔ آپ کی پیروی فرمان ِالٰہی کے مطابق ہے۔
ﷲ تعالیٰ نے اپنے پاک کلام میں ارشاد فرمایا ۔
یٰاَیُّهَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا اَطِیْعُوا اللّٰهَ وَ اَطِیْعُوا الرَّسُوْلَ وَ اُولِی الْاَمْرِ مِنْكُمْ ،
( سورہ نسا آیت ۵۹)
اے ایمان والو ! اللہ کی اطاعت کرو اور رسول کی اطا عت کرو اور اپنے امیرکی۔
اس مختصر رسالے میں آہستہ اٰمین کہنے پر حدیث وفقہ کی ۲۶ مشہور ومعروف اورمستند کتا بوں کے حوالہ سے ،سات احادیث کریمہ پیش کردی گئی ہیں، جو اہل حق کوقبول کرنے کے لئے کا فی ہیں……مزید تفصیل کے لئے حضرت مولانا ظفر الدین رضوی رحمۃ اللہ علیہ کی صحیح البہاری شریف، اور حضرت مولانا احمد یار خاں نعیمی رحمۃ اللہ علیہ کی مشہور ومعروف کتاب ْجاء الحقْ کا مطالعہ فرمائیں۔

وَاللّٰہُ الْھَادِی وَالمُعِیْنُ ، نِعمَ المَولٰی وَنِعْمَ النَّصِیْرُ، وَصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی خَیْرِخَلْقِہٖ مُحَمَّدٍ وَّاٰ لِہٖ وَاَصْحَابِہٖ اَجْمَعِیْنَ ، بِرَحْمَتِکَ یَا اَرْحَمَ الرَّاحِمِیْنَ ۔

 

احمدالقادری مصباحی
اسلامک اکیڈمی آف امریکا
۵؍ صفر۱۴۲۳ھ ۲۱؍اپریل ۲۰۰۲ء

رفع یدین کے احکام، احمد القادری مصباحی
نَحْمَدُہٗ وَنُصَلِّیْ عَلٰی رَسُوْلِہٖ الْکَرِیْمِ۝
بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ۝

رفع یدین کے احکام
ازاحمد القادری مصباحی

نمازپنجگانہ اور جمعہ میں، صرف پہلی تکبیر کے وقت ہی ہاتھ اٹھا نا سنت ہے ،اس کے بعد نہیں۔ اس مسئلہ کے ثبوت میں بکثرت احادیث آئیں ہیں۔ چند حدیثیںملاحظہ فرمائیں۔
{۱} حضرت برا ء بن عازب رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے، انھوں نے کہا کہ
کان النبی ﷺ اذا افتتح الصلوۃ رفع یدیہ ثم لا یرفعھما حتی یفرغ۔
(۱۔ترمذی،۲۔ ابن شیبہ)
نبی ﷺ جب نماز شروع فرماتے ،تو اپنے ہاتھ اٹھاتے تھے، پھر نماز سے فارغ ہونے تک نہ اٹھاتے۔
{۲} حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیان کرتے ہیں۔
کان النبی ﷺ یرفع یدیہ فی اول تکبیرۃ ثم لا یعود۔
(۳)طحاوی شریف، ۴۔فتح القدیر، ۵۔مرقاۃ شرح مشکوۃ)
نبی ﷺ پہلی تکبیر میں ہاتھ اٹھاتے، پھر نہ اٹھاتے۔
{۳}حضرت عبداللہ بن عباس اور عبداللہ بن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہم نے فرما یا کہ رسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایاــ۔
ترفع الایدی فی سبع مواطن عند افتتا ح الصلوۃ و استقبال البیت والصفا والمروۃ والمو قفین والجمرتین.
(۶۔حاکم، ۷۔بیہقی)
صرف ساتھ جگہ ہاتھ اٹھائیں جائیں۔
(۱) نماز شروع کرتے وقت
(۲) کعبہ کے سامنے منہ کرتے وقت
(۳) صفا،مروہ پہاڑی پر
(۴،۵) دونوں موقف( مِنَی اور مُزْدَلِفَہ) میں۔
(۶،۷)دونوں جمروں کے سامنے ۔
اس حدیث میں صرف نماز شروع کرتے وقت ہاتھ اٹھانے کا حکم ہے، بعد میں نہیں۔
ان کے علاوہ اس حدیث کو امام بخاری رحمۃاللہ علیہ نے ۔
(۸)کتاب المفرد ؔمیں حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے ۔
(۹) بزارؔ نے حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے ۔
(۱۰)ابن شیبہؔ اورطبرانی ؔنے حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے، کچھ فرق سے بیان کیا۔
{۴} حضرت ابو حمید ساعدی رضی اللہ تعالیٰ عنہ روایت کرتے ہیں، کہ میں نے صحا بہ کی ایک جماعت سے کہا، کہ مجھے رسول اللہ ﷺ کی نماز، سب سے زیا دہ یا د ہے۔
رأیتہ ﷺاذا کبر جعل یدیہ حذاء منکبیہ ،واذارکع امکن یدیہ من رکبتیہ، ثم ھصر ظھرہ، فاذا رفع راسہ استوی، حتی یعود کل فقار مکانہ، فاذا سجد وضع یدیہ غیر مفترش ولا قابضھما واستقبل باطراف اصبع رجلیہ القبلۃ، فاذا جلس فی الرکعتین ،جلس علی رجلہ الیسری ونصب الیمنی۔
(۱۱۔ بخاری،۱۲۔ابو داؤد،۱۳۔مشکوۃ،)
میں نے دیکھا ،کہ جب نبی ﷺ تکبیر تحریمہ کہتے، تو ہاتھوں کو کندھے تک اٹھاتے۔ اور جب رکوع کرتے، تو گھٹنوں کو ہا تھوں سے پکڑتے اور کمرسیدھی کرتے، جب سجدہ سے سر اٹھا تے ،تو اس طرح سیدھے کھڑے ہوتے ،کہ کمر کی ہڈی کے تمام مہرے اپنی جگہ آجا تے، اور جب سجدہ کرتے، تو ہاتھوں کو زمین پر رکھتے، نہ ان کو سُکڑ تے، اورنہ کہنیوں کو زمین پر بچھاتے، اور پیروں کی انگلیوں کا رخ، قبلہ کی طرف رکھتے، اور دو رکعت کے بعد بائیں پاؤں پر بیٹھ کر سیدھا پیر کھڑا کرتے۔
اس حدیث میں، حضور ﷺ کی نماز کی ،پوری کیفیت بیان کی گئی ،جس میں صرف ایک بار، تکبیر تحریمہ کے وقت ہاتھ اٹھا نے کا ذکر ہے، اس کے بعدہاتھ اٹھا نے کا کوئی ذکر نہیں۔ اگر رکوع کے بعد بھی رفع یدین ،نبی اکرم ﷺ کرتے ہوتے، یا اس کا حکم ہوتا ،تو حضرت ابو حمید سا عدی رضی اللہ تعالیٰ عنہ اس کا ذکر کیوں نہ کرتے؟
{۵} حضرت علقمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کہتے ہیں، کہ ہم سے حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرما یا ۔
الا اصلی بکم صلاۃ رسول ﷲ ﷺ، فصلی ولم یرفع یدیہ۔ الا مرۃ واحدۃ مع تکبیرۃ الا فتتاح۔
(۱۴۔مجمع الزوائد،۱۵۔ ترمذی، ۱۶۔ابوداؤد، ۱۷۔نسائی، ۱۸۔ابن ابی شیبہ، ۱۹۔طحاوی، ۲۰۔عبدالرزاق)
کیا میں تمھارے سامنے رسول اللہ ﷺکی نماز نہ پڑھوں؟ تو آپ نے نماز پڑھی۔ اس میں سوائے تکبیر تحریمہ کے، کسی موقع پہ ہاتھ نہ اٹھائے۔
{۶}حضرت براء بن عازب رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے ،
انہ رأالنبیﷺ حین افتتح الصلوۃ، رفع یدیہ حتی حاذی بھما اذنیہ، ثم لم یعد الی شیئی من ذالک، حتی فرغ من صلاتہ
(۲۱۔دار قطنی)
کہ انھوں نے نبی ﷺ کو دیکھا ،کہ جب حضور ﷺ نے نماز شروع کی تو ہاتھ اتنے اٹھا ئے کہ کانوں کے مقابل کردئے، پھر نماز سے فارغ ہونے تک کسی جگہ ہاتھ نہ اٹھائے۔
{۷} حضرت براء بن عازب رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے دوسری روایت ہے ، فرمایا۔
ان رسول ﷲ ﷺ کان اذاافتتح الصلوۃ رفع یدیی الی قریب من اذنیہ، ثم لایعود۔
(۲۲۔ ابوداؤد)
بے شک رسول ﷲ ﷺ جب نماز شروع کرتے، تو کانوں کے قریب تک ہاتھ اٹھاتے تھے۔ پھردوبارہ ایسا نہ کرتے۔
{۸}امام بخاری اور امام مسلم کے استاذ، امام حمیدی نے اپنی مسند میں ،حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت کیا، کہ نبی ﷺ صرف تکبیر تحریمہ کے وقت، رفع یدین کرتے تھے، اور رکوع کے بعد رفع یدین نہیں کرتے تھے۔ (۲۳۔مسند حمیدی)
{۹} حضرت علقمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کہتے ہیں کہ حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرمایا۔
صلیت مع النبی ﷺ مع ابی بکر ومع عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما فلم یرفعوا ایدیھم الا عند التکبیرۃ الاولی فی افتتاح الصلوۃ۔
(۲۴۔ دار قطنی)
میں نے نبی ﷺ حضرت ابوبکر، حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما کے ساتھ نمازپڑھی یہ لوگ نماز کے شروع میں صرف پہلی تکبیر کے وقت ہاتھ اٹھاتے۔
یہاں تک تو نبی اکرم ﷺ سے، مرفوع حدیثیں تھیں۔ اب صحا بۂ کرام رضی اللہ تعالیٰ عنہم کی احادیث ملاحظہ فرمائیں ،اس لئے کہ صحابۂ کرام کا قول و فعل بھی مسلمانوںکےلئے دلیل ہے۔ اور صحابہ کی حدیث کو بھی، حدیث کہتے ہیں، اور صحابہ کی بکثرت احادیث، بخاری، مسلم اور دیگر کتبِ احادیث میں موجود ہیں۔ کیونکہ نبی اکرم ﷺ نے ارشاد فرمایا۔
اَصْحَابِیْ کَا لنُّجُوْمِ، بِاَ یِّھِم اِقْتَدَیْتُمْ اِھْتَدَیْتُم ۔
(مشکوۃ)
میرے صحابہ ستاروں کی طرح ہیں، ان میں جن کی پیروی کروگے، ہدایت یاب ہوجاؤگے۔
{۹}حضرت مجاہد سے روایت ہے، انھوں نے فرمایا۔
صلیت خلف ابن عمررضی اللہ تعالیٰ عنہما، فلم یکن یرفع یدیہ الافی التکبیرۃ الاولی من الصلوۃ ۔
(۲۵۔طحاوی،۲۶۔ ابن ابی شیبہ )
میں نے ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما کے پیجھے نماز پڑھی ،آپ نماز میں پہلی تکبیر کے سوا کسی وقت ہا تھ نہ اٹھاتے۔
{۱۱} حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے ۔
انہ کان یرفع یدیہ فی التکبیرۃ الاولی من الصلوۃ، ثم لایرفع فی شیئی منھا۔
(۲۷۔بیہقی،۲۸۔ طحاوی،۲۹۔ مؤطا )
کہ آپ نماز کی پہلی تکبیر میں ہاتھ اٹھاتے تھے ،پھر کسی حالت میں ہاتھ نہ اٹھاتے تھے۔
{۱۲}حضرت اسود رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے ، کہا
رأیت عمر ابن الخطاب رضی اللہ تعالیٰ عنہ رفع یدیہ فی اول تکبیرۃ ثم لا یعود ۔
( ۳۰۔طحاوی شریف)
میں نے حضرت عمر ابن خطاب رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو دیکھا ،کہ آپ نے پہلی تکبیر میں ہاتھ اٹھائے ،پھر نہ اٹھا ئے۔
{۱۳} حضرت سفیا ن (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) فرماتے ہیں کہ
فرفع یدیہ (عبدﷲبن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ) فی اول مرۃ وقال بعضھم مرۃواحدۃ ۔
(۳۱۔ ابوداؤد شریف، ۳۲۔مؤطا)
حضرت عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ پہلی بار ہی ہاتھ اٹھاتے۔ بعض راویوں نے فرما یا کہ ایک ہی دفعہ ہا تھ اٹھاتے۔
{۱۴} حضرت عبدالعزیز بن حکیم (رضی اللہ تعالیٰ عنہ)نے کہا کہ
رأیت ابن عمر رضی اللّٰہ تعالیٰ عنہما، یرفع یدیہ حذاء اذنیہ فی اول تکبیرۃ افتتاح الصلوۃ، ولم یرفعھما فی ما سوی ذلک ۔
(۳۳۔ مؤطا شریف )
میں نے حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما کو نماز کے شروع میں تکبیر اولی کے وقت اپنے ہا تھ، کانوں کی لو تک اٹھاتے دیکھا۔ اور اس کے علاوہ وہ ہاتھ نہیںاٹھاتے تھے۔
{۱۵}حضرت ابن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما نے فرما یا ۔
ان العشرۃ الذین شھد لھم رسول اﷲ ﷺ بالجنۃ، ماکانوا یرفعون ایدیھم الا افتتاح الصلوۃ ۔
( ۳۴۔فتح القدیر،بدائع الصنائع،اعلاء السنن)
وہ دس( عشرہ مبشرہ )صحابہ رضی اللہ تعالیٰ عنہم جن کے جنتی ہو نے کی رسول اﷲ ﷺ نے گواہی دی ان میں سے کوئی بھی تکبیر تحریمہ کے علاوہ، رفع یدین نہیں کرتا تھا۔

رَفع یدین کی حدیث بھی آئی ہے مگر وہ منسوخ ہے

{۱۶} حضرت عبداللہ بن زبیر رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت ہے
انہ رأی رجلا یرفع یدیہ فی الصلوۃ عند الرکوع وعند رفع راسہ من الرکوع ،فقال لہ لا تفعل فانہ شیئی فعلہ رسول اﷲ ﷺ ثم ترکہ ۔
(۳۵۔عینی شرح بخاری)
کہ آپ نے ایک شخص کو رکوع میں جاتے اور رکوع سے اٹھتے وقت ہاتھ اٹھاتے دیکھا ،تو اس سے فرمایا کہ، ایسا نہ کرو۔ کیونکہ یہ وہ کام ہے جو رسول اللہ ﷺ نے پہلے کیا تھا،پھر چھوڑ دیا۔
اس حدیث سے صاف ظاہر ہے، کہ رکوع میں جاتے اور رکوع سے اٹھتے وقت، رفع یدین (ہاتھ اٹھانے) کی حدیث منسوخ ہے۔
{۱۶} بعض صحابہ کرام تکبیراولیٰ کے علاوہ، رکوع میں جاتے اٹھتے وقت رفع یدین کرتے تھے ،اس سے منع کیا گیا ۔ حدیث یہ ہے۔
حضرت جابر بن سمرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ ہمارے پاس تشریف لائے اور فرمایا ۔
مالی اراکم رافعی ایدیکم، کانھا اذناب خیل شمس، اسکنوا فی الصلوۃ۔
(۳۶۔ صحیح مسلم،۳۷۔ مسند امام احمد بن حنبل،۳۸۔ابو داؤد، ۳۹۔نسائی،۴۰۔بیہقی، بہار شریعت)
یہ کیا بات ہے کہ میں تم کو (بار بار) ہاتھ اٹھاتے دیکھتا ہوں ،جیسے چنچل گھو ڑے کی دُمیں،نماز میں سکون کے سا تھ رہو۔
بار بار ہاتھ اٹھا نا، گرانا، یہ سکون و اطمینا ن کے خلاف حرکت ہے، اس لئے اس سے روکا گیا۔ اورنبی اکرم ﷺ نے خود اس سے منع فرمادیا۔
اس حدیثِ مرفوع سےبھی معلوم ہوا، کہ بار بار ، رفع یدین کرنا(ہاتھ اٹھانا) منسوخ ہے۔
چند اکابر صحابہ کرام کے نام، جو صرف پہلی تکبیر کے وقت ہا تھ اٹھاتے تھے۔
حضرت ابو بکر صدیق، حضرت عمر فاروق، حضرت عثمان غنی، حضرت علی، حضرت عبدالرحمٰن بن عوف، حضرت زبیر بن العوام، حضرت ابو عبیدہ بن الجراح، حضرت طلحہ، حضرت سعد بن ابی وقاص، حضرت سعید بن زید رضی اللہ تعالیٰ عنہم اجمعین۔یہ تو عشرہ مبشرہ ہیں جنھیں جیتے جی، دنیا ہی میں نبی اکرم ﷺ نے جنت کی بشارت سنادی تھی۔
ان کے علاوہ حضرت عبداللہ بن مسعود، حضرت براء بن عازب، حضرت جابر بن سمرہ، حضرت ابو سعید خدری، حضرت عبد اللہ بن زبیر وغیرہم، رضی اللہ تعالیٰ عنہم اجمعین،یہ وہ اکابر صحابہ ہیں جن کے بارے میں روایت موجود ہے کہ وہ تکبیرتحریمہ کے علاوہ اور کسی موقع پر رفع یدین نہیں کر تے تھے۔ (نزھتہ القاری شرح بخاری جلد ۳ ص۲۰۰)

خلاصۂ کلام

مذکورہ بالااحادیث اور دلائل وبراہین سے دن کے اجالے کی طرح یہ واضح ہوگیا کہ پنجگانہ نماز کے شروع میں صرف تکبیر تحریمہ کے وقت رفع یدین کرنا سنت ہے۔ رکوع سے پہلے اوررکوع کے بعدرفع یدین کی حدیث منسوخ ہے۔ یہی امام اعظم ابو حنیفہ رحمۃاﷲ علیہ کا فتوی ہے،جو بکثرت احادیث و سنن سے ثابت ہے ، ان کا کوئی فتوی سنت کے خلاف نہیں ہوتا،جو ان کے فتوی کو خلاف سنت بتائے وہ یاتو ان کا حاسدہوگا یا دشمن۔
اس مختصر رسالے میںصرف پہلی تکبیر کے وقت ہاتھ اٹھا نے پر حدیث وفقہ کی۴۰ مشہور ومعروف اورمستند کتا بوں کے حوالہ سے سترہ احادیث کریمہ پیش کردی گئی ہیں، جو حق پسند کو ، حق قبول کرنے کے لئے کا فی ہیں…مزید تفصیل کے لئے حضرت مولانا ظفر الدین رضوی رحمۃ اللہ علیہ کی صحیح البہاری شریف، اور حضرت مولانا احمد یار خاں نعیمی رحمۃ اللہ علیہ کی مشہور ومعروف کتاب ْجاء الحقْ کا مطالعہ فرمائیں۔
وَاللّٰہُ الْھَادِی وَالمُعِیْنُ ، نِعمَ المَولٰی وَنِعْمَ النَّصِیْرُ، وَصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی خَیْرِخَلْقِہٖ مُحَمَّدٍ وَّاٰ لِہٖ وَاَصْحَابِہٖ اَجْمَعِیْنَ ، بِرَحْمَتِکَ یَا اَرْحَمَ الرَّاحِمِیْنَ ۔

احمد القادری مصباحی
اسلامک اکیڈمی آف امریکا
۵؍ صفر۱۴۲۳ھ ۲۱؍ اپریل ۲۰۰۲ء

احکام قربانی وعقیقہ، احمد القادری
احکام قربانی
بِسْمِ اللّہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْم
قَالَ یٰبُنَیَّ اِنِّیْ اَرَ یٰ فیِ الْمَنَامِ اَنِّیْ اَذْ بَحُکَ فَانْظُرْ ماَذَا تَرَیٰ قَال یٰأَ بَتِ افْعَلْ
مَاتُؤ مَرُ سَتَجِدُنِي اِنْ شَاءَ اللّٰہُ مِن الصّٰبِرِیْنَ۔
(قرآن کریم سورۃ ۳۷ :آیت ۱۰۲)
اے میرے فرزند! میں نے خواب دیکھا ہے کہ تمھیں ذبح کررہا ہوں اب دیکھو تمھاری کیا رائے ہے؟ —— اللہ کے دوست حضرت ابراہیم علیہ السلام نے فرمایا۔
ابا جان ! اسے کیجیے جس بات کا آپ کو حکم ہوتا ہے ۔ ان شاء اللہ عنقریب مجھے صابر پائیں گے۔
ان کے پیارے بیٹے حضرت اسمٰعیل علیہ السلام نے جواب دیا ۔
اے مسلمان سن یہ نکتہ درسِ قرآنی میں ہے
عظمتِ اسلام ومسلم، صرف قربانی میں ہے
زندگیِ جا وداں، مومن کی قربانی میں ہے
لذتِ آب بقا، تلوار کے پانی میں ہے
بسْمِ اللّہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْم۵
نَحْمَدُہ وَنُصَلِّیْ عَلیٰ رَسُوْلِہِ الْکَرِیْم
{فضائل ومَسائل قربانی}
قربانی:
مخصوص جانور کا ایام ِنحر میں ،بہ نیت ِتَقَرُّبْ، ذبح کرنا قربانی ہے۔
قربانی حضرت ابراہیم علیہ السلام کی سنت ہے ۔ مسلمانوں کو قربانی کرنے کا حکم دیا گیا ۔ خدا وند کریم کا ارشاد ہے فَصَلِّ لِرَبِّکَ وَانْحَر اپنے رب کے لیے نماز پڑھو اور قربانی کرو۔(سورۃ ۱۱۰: آیت ۲)
{احادیث وآثار }
حد یث۱ } حضرت زیدبن ارقم رضی اللہ عنہ سے روایت ہے وہ کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے صحابہ کرام نے عرض کیا۔ یا رسول اللہ ! قربانیاں کیا ہیں ؟ آپ نے نے فرمایا یہ تمھارے باپ ابراہیم (علیہ السلام) کی سنت ہے، صحابہ نے عرض کیا یارسو ل اللہ! ہمیں اس میں کیا ثواب ملے گا ؟ فرمایا ہر بال کے بدلے ایک نیکی۔(احمد ،ابن ماجہ)
حد یث۲} حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا۔ قربانی کے دنوں میں ابن آدم کا ،کوئی عمل اللہ تعالیٰ کے نزدیک خون بہانے (یعنی قربانی کرنے ) سے زیادہ پیارا نہیں، اور وہ جانور قیامت کے دن اپنے سینگوں ، بالوں، کھروں کے ساتھ آئے گا ،اور قربانی کا خون زمین پر گرنے سے پہلے اللہ تعالیٰ کے نزدیک مقامِ قبول میں پہنچ جاتا ہے۔ (ترمذی،ابن ماجہ)
حد یث۳ } حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا، جس میں وسعت ہو اور قربانی نہ کرے تو وہ ہماری عید گاہ کے قریب ہرگز نہ آئے ۔ (ابن ماجہ)
حد یث۴} حضرت ابن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت ہے کہ نبی صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے فرمایا ۔ جومال عید کے دن قربانی میں خرچ کیاگیا اس سے زیادہ کوئی مال پیارا نہیں ۔ (طبرانی)
حد یث۵} امام احمد رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے روایت کی رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے فرمایا۔ افضل قربانی وہ ہے جو باعتبارِ قیمت اعلیٰ اور خوب فربہ ہو ۔ (امام احمد)
حدیث۶} حضرت علی کرم اللہ وجہہ الکریم سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعا لی ٰ علیہ وسلم نے فرمایا ،چار قسم کے جانور قربانی کے لیے درست نہیں ۔(۱) کانا: جس کا کانا پن ظاہر ہو(۲) بیمار : جس کی بیماری ظاہر ہو(۳)لنگڑا : جس کا لنگ ظاہر ہو (۴) لاغر: ایسا جس کی ہڈیوں میں مغز نہ ہو۔ (امام احمد، ترمذی ، ابوداؤد ، نسائی، ابن ماجہ، دارمی)
حد یث ۷ } حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کان کٹے، اور سینگ ٹوٹے ہوئے کی، قربانی سے منع فرمایا۔ (امام احمد، ابن ماجہ)
حد یث۸} حضرت عبد ا للہ ابن مسعو د رضی ا للہ تعا لیٰ عنہ سے روایت ہے کہ نبی ﷺنے فرمایا ۔قربانی میں گائے سات کی طرف سے، اور او نٹ سات کی طرف سے ہے۔ (طبرانی)
حد یث۹} حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے، رات میں قربانی کرنے سے منع فرمایا ۔
حدیث۱۰} حضرت ام سلمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے روایت ہے ، کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے فرمایا۔ جب تم ذی الحجہ کا چاند دیکھو اور تم میں کا کوئی قربانی کرنا چاہے تو اس کوچاہئے کہ بال منڈانے، یا ترشوانے، اور ناخن کٹانے سے رکا رہے ۔ (مسلم)
حدیث۱۱} حضرت عبد اللہ ابن عمررضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے فرمایا ۔مجھے یوم اضحی کاحکم دیا گیا، اس دن کو خدا نے اس امت کے لیے عید بنایا ہے ۔ ایک شخص نے عرض کیا یا رسول اللہ ! یہ بتائیے کہ میرے پاس منیحہ۱ ؎کے سوا کوئی جانور نہ ہو تو کیا اسی کی قربانی کروں ؟ فرمایا نہیں ۔ ہاں تم اپنے بال، ناخن، اور مونچھیں ترشواؤ اورموئے زیر ناف مونڈ و، اسی میں تمھاری قربانی خدا کے نزدیک پوری ہوجائے گی ۔( ابو داؤد ،نسائی )
یعنی جس کو قربانی کی توفیق نہ ہوا سے ان چیزوں کے کرنے سے قربانی کا ثواب حاصل ہوجائے گا ۔
۱ ؎ منیحہ: ایسادودھ والا جانور جس سے فائدہ اٹھانے کے لئے کسی کو دیاگیا ہو۔ اس صورت میں اسے جانور کے دودھ سے نفع اٹھانے کا اختیار ہے۔لیکن منیحہ کا مالک نہیں ہوتا، اس لئے اس جانورکی قربانی بھی نہیں کرسکتا، جب تک اس جانور کو مالک سے خرید نہ لے ، یا مالک اسے ھبہ نہ کردے۔
{چند اہم مسائل}
مسئلہ ۱ : قربانی کے مسئلے میں صاحبِ نصاب وہ شخص ہے جو ساڑھے باون تولے، ( 612.412گرام ،یا 19.755 اونس) چاندی یا ساڑھے سات تولے،( 87.487گرام، 2.822 اونس) سونے کا مالک ہو ۔ یا ان میں سے کسی ایک کی قیمت کا، سامانِ تجارت یا سامانِ غیر تجارت ، یا اتنے نقد روپیوں کا مالک ہو اور مملوکہ چیزیں حاجتِ اصلیہ سے زائد ہوں۔
مسئلہ۲: حاجتِ اصلیہ یعنی جس کی زندگی بسر کرنے میں آدمی کو ضرورت ہے۔ اس کی وجہ سے قربانی واجب نہیں ، نہ اس میں زکوٰۃ واجب ہے جیسے رہنے کا مکان ، جاڑے گرمیوں میں پہننے کے کپڑے ، خانہ داری کے سامان ، سواری کے جانور یا گاڑیاں ، پیشہ وروں کے اوزار، اہلِ علم کے لیے حاجت کی کتابیں ۔
مسئلہ۳: کتاب سے مراد قرآن ، تفسیر، حدیث، اصول حدیث، فقہ اصول فقہ ، علمِ کلام اور اخلاق وغیرہ مذہبی کتابیں ہیں۔ اسی طرح طب کی کتابیں ،طبیب کے لیے حاجتِ اصلیہ سے ہیں ۔
مسئلہ۴: ان کے علاوہ نحو، صرف، نجوم، قصے ، کہانی ، دیوان وغیرہ کتب اور مذہبی کتابوں کے ایک سے زائد نسخے حاجتِ اصلیہ سے نہیں۔ اگر ان کی قیمت، نصاب کو پہنچے تو اس پر قربانی واجب ہے ۔
مسئلہ۵: حافظ کے لیے قرآنِ مجید حاجتِ اصلیہ سے نہیں ۔
مسئلہ۶: مسافر پر قربانی واجب نہیں، اگرچہ مالدار ہو ۔ ہاں نفل کے طور پر چاہے تو کرسکتا ہے ۔
مسئلہ۷: عورت کے پاس باپ کا دیا ہوازیور ،یا کوئی اور سامان، جو اس کی ملک ہے، اگر وہ نصاب کی قیمت کے برابر ہو، تو عورت پر بھی قربانی واجب ہے ۔
مسئلہ۸ : جو مالک ِنصاب، اپنے نام سے ایک بار قربانی کرچکا ہے اور دوسرے سال بھی وہ صاحب ِنصاب ہے، تو اس پر اپنے نام سے قربانی کرنا واجب ہے ۔ یہی حکم ہر سال کا ہے ۔
حدیث میں ہے۔ اِنَّ عَلیٰ کُلِّ اھْلِ بَیْتٍ فِی کُلِّ عَامٍ اُضْحِیَّۃً (ترمذی)
مسئلہ۹: اگر کوئی صاحب ِنصاب، اپنی طرف سے قربانی کرنے کے بجائے ، دوسرے کی طرف سے کردے ، اور اپنے نام سے نہ کرے، تو سخت گنہ گار ہوگا۔ لہذا، اگر دوسرے کی طرف سے کرنا چاہتا ہے، تو اس کے لیے، ایک دوسری قربانی کا انتظام کرے۔
{قربانی کے جانور}
مسئلہ۱۰:اونٹ ،گائے ،بھینس، بکری،بھیڑ، دنبہ، نر ہو یا مادہ ، خصی ہو یا غیرخصی، سب کی قربانی جائز ہے ۔
مسئلہ۱۱:اونٹ پانچ سال کا، گائے بھینس دوسال کی ،بکری بھیڑ دنبہ، ایک سال کاہوناضروری ہے۔ اس سے کم عمرہو، تو قربانی جائز نہیں،اگر زیادہ ہو تو جائز ،بلکہ افضل ہے۔ ہاں صرف بھیڑیا دنبہ کا چھ ماہ کا بچہ، اگر اتنا بڑا ہو، کہ دورسے دیکھنے میں، ایک سال کا معلوم ہوتا ہو، تو اس کی قربانی جائز ہے ۔
مسئلہ۱۲ : صاحب نصاب پر ایک بکری کا ذبح کرنا یا اونٹ، گائے، بھینس کا ساتواں حصہ واجب ہے ۔ ساتویں حصہ سے کم نہیں ہوسکتا۔
مسئلہ۱۳:ساتویں حصہ سے زیادہ مثلاً گائے، بھینس کو چھ یا پانچ شخصوں کی طرف سے قربانی کریں تو ہوسکتا ہے ۔ بلکہ پوری گائے ایک شخص اپنی طرف سے کرسکتا ہے۔
{ایام قربانی}
مسئلہ۱۴: قربانی کا وقت دسویں ذی الحجہ کے طلوع صبح صادق سے، بارہویں کے غروب آفتاب تک ہے، یعنی تین دن، دو راتیں۔
مسئلہ۱۵: قربانی کے لیے دسویں تاریخ، سب میں افضل ہے، پھر گیارہویں ، پھر بارہویں ۔
مسئلہ ۱۶: شہر میں نماز عید سے پہلے، قربانی کرنا جائز نہیں ۔
{گوشت وجلد کے احکام }
مسئلہ۱۷ : قربانی کا گوشت خود بھی کھا سکتا ہے، اوردوسرے شخص، غنی یا فقیر کو دے سکتا ہے یا کھلا سکتا ہے، بلکہ اس میں سے کچھ کھالینا ، قربانی کرنے والے کے لیے مستحب ہے ۔
مسئلہ۱۸ :قربانی کرنے والے کے لیے افضل یہ ہے کہ دسویں ذی الحجہ کو صبح سے کچھ نہ کھائے پیئے، جب قربانی ہوجائے تو اسی کے گوشت سے افطار کرے۔
مسئلہ۱۹: بہتر یہ ہے کہ گوشت کے تین حصے کرے، ایک حصہ فقرا ء ومساکین کے لیے ، ایک حصہ احباب ورشتہ دار کے لیے، ایک حصہ اپنے گھر والوں کے لیے ، اگر اہل وعیال زیادہ ہوں تو کل گوشت بھی گھروالوں کو کھلا سکتا ہے ۔
مسئلہ۲۰: میت کی طرف سے قربانی کی، تو اس کا گوشت خود بھی کھا سکتا ہے اور احباب کو بھی کھلا سکتا ہے ، جبکہ میت نے وصیت نہ کی ہو، ورنہ کل گوشت صدقہ کردے۔
مسئلہ۲۱: قربانی اگر منت ہے تو اس کا گوشت نہ خود کھا سکتا ہے نہ اغنیاء کو کھلا سکتا ہے بلکہ اسے صدقہ کردینا واجب ہے ۔ منت ماننے والا فقیر ہو یا مالدار ۔
مسئلہ۲۲ : قربانی کا گوشت کا فر کو دینا جائز نہیں ۔
مسئلہ۲۳ : قربانی کا چمڑا یاگوشت یا اس کی کوئی چیز قصاب یا ذبح کرنے والے کو اجرت میں دینا جائز نہیں ۔
{چرم قربانی }
مسئلہ۲۴ : قربانی کا چمڑا بیچ کر قیمت، اپنے مصرف میں لانا جائز نہیں ۔ ہاں چمڑا، اپنے استعمال میں لاسکتا ہے ۔
مسئلہ۲۵: آج کل اکثر لوگ کھال دینی مدارس میں دیا کرتے ہیں یہ افضل اور بہت زیادہ ثواب کا باعث ہے۔ بعض مرتبہ وہاں کھال بھیجنے میں دقت ہوتی ہے، تو اسے بیچ کر قیمت بھیج دیتے ہیں، اس میں بھی حرج نہیں ۔
{ذبح کا طریقہ}
مسئلہ۲۶: ذبح میں چار رگیں کاٹی جاتی ہیں ۔ چاروںرگوں میں سے تین کٹ گئیں یا ہر ایک کا اکثر حصہ تو ذبیحہ حلال ہے ۔
مسئلہ۲۷ : ذبح کرنے میں قصداً بِسْمِ اللہِ اللہُ اَکْبَرْ نہ کہا (یعنی اللہ کا نام نہ لیا ) توجانور حرام ہے ۔ اور بھول کر ایسا ہو اتو حلال ہے۔
مسئلہ۲۸: اگر پور اذبح کرنے سے پہلے قصاب کے حوالے کیا ،تو اس کے لیے بھی ضروری ہے کہ بِسْمِ اللہِ اللہُ اَکْبَرْ، کہہ کر ہی ہاتھ لگائے۔
مسئلہ۲۹ : اس طرح ذبح کرنا کہ چھری حرام مغز تک پہنچ جائے یا سرکٹ کر جداہوجائے مکر وہ ہے، مگروہ ذبیحہ کھایا جائے گا ۔ یعنی کراہت اس فعل میں ہے، ذبیحہ میں نہیں ۔
مسئلہ۳۰ : ذبح میں عورت کا وہی حکم ہے جو مرد کا ہے یعنی دونوں کا ذبیحہ جائز ہے۔
مسئلہ۳۱ : مشرک اور مرتد کا ذبیحہ مردار اور حرام ہے ۔
{قربانی کا طریقہ}
مسئلہ۳۲ : قربانی کا جانور بائیں پہلو پر اس طرح لٹائیں کہ اس کا منہ قبلہ کی طرف ہو ،اوراپنا دایاں پاؤں ،اس کے پہلو پر رکھیں ۔ اورذبح سے پہلے یہ دعا پڑھیں۔
اِنِّیّ وَجَّھَتُ وَجْھِیَ لِلَّذِیْ فَطَرَ السَّمٰوَاتِ وَالاَرْضَ حَنِیْفاًوَّمَا اَنَامِنَ المُشْرِکِیْنَ0 اِنَّ صَلاَ تِیْ وَنُسُکِیْ وَمَحْیَایَ وَمَمَاتِیْ لِلّٰہِ رَبِّ العٰلَمِیْنَ ،لاَشَرِیْکَ لَہٗ وَبِذَلِکَ اُمِرْ تُ وَاَنَا مِنَ الْمُسْلِمِیْنَ0
پھر اَ للّٰھُمَّ لَکَ وَمِنْکَ بِسْمِ اللہِ اَللہُ اَکْبَرْ پڑھتے ہوئےتیز چھری سے ذبح کرے ۔ قربانی اپنی طرف سے ہو، توذبح کے بعد یہ دعا پڑھیں۔اَللّٰھُمَّ تَقَبَّلْ مِنِّی کَماَ تَقَبَّلْتَ مِنْ خَلِیْلِکَ اِبْرَ اھِیْمَ وَحَبِیْبِکَ مُحَمَّدٍ عَلَیْھِمَاالصَّلاۃُ وَالسَّلامُ ۔
اگردوسرے کی طرف سے ذبح کرنا ہے تو مِنِّی کی جگہ مِنْ کے بعداس کا نام لے۔
مسئلہ۳۳: اگر وہ جانور مشترک ہے تو اس طرح لکھ کر ذبح کے بعد پڑھ لیں ۔
اَللّٰھُمَّ تَقَبَّلْ مِنْ
(۱)……………ابن……………
(۲)……………ابن……………
(۳)……………ابن……………
(۴)……………ابن……………
(۵)……………ابن……………
(۶)……………ابن……………
(۷)……………ابن……………
کَمَاتقَبَّلْتَ مِنْ خَلِیْلِکَ اِبْرَاھِیْمَ وَحَبِیْبِکَ مُحَمَّدٍ عَلَیْھِمَاالصَّلاۃُ وَالسَّلامُ ۔
{نماز عیدین}
مسئلہ۳۴: عید کے دن غسل کرنا ، اچھے کپڑے پہننا ، خوشبو لگانا، ایک راستہ سے عیدگاہ جانا، دوسرے سے واپس آنا ، راستہ میں تکبیر کہتے ہوئے جانا مستحب ہے ۔ عید الفطر میںتکبیر آہستہ اور صبح کچھ میٹھا کھا کر عیدگاہ جانا مستحب ہے، مگر عید الاضحی میں تکبیر ، بلند آواز سے کہتے ہوئے جانا اور صبح سے قربانی کرنے تک کچھ نہ کھانا پینا، مستحب ہے ۔ عید ین کی نماز ’’دو رکعت ‘ ‘ واجب ہے بِسْمِ اللہِ اَللہُ اَکْبَرْ ۔
{نماز عیدین کا طریقہ}
مسئلہ۳۵: پہلے یوں نیت کرے، نیت کی میں نے دورکعت نماز عید… کی واجب، چھ زائد تکبیروں کے ساتھ، منھ میرا کعبہ شریف کی طرف، اللہ کے واسطے، اَللہُ اکْبَر کہتے ہوئے ہاتھ باندھ لے۔ امام ثنا پڑھے گا، تین زائد تکبیر کہے گا ۔پہلی دو تکبیروں میں کانوں تک ہاتھ لے جائے اور اَللہُ اَکْبَر کہتا ہوا ہاتھ چھوڑ دے، تیسری تکبیر میں کانوں تک ہاتھ لے جائے اور اَللہُ اکْبَر کہتے ہوئے ہاتھ باندھ لے۔ ایک رکعت پوری کر کے دوسری رکعت کے رکوع سے پہلے تین زائد تکبیریں کہے۔ تینوں میں کانوں تک ہاتھ لے جائے اور اَللہُ اکْبَر کہتا ہوا ہاتھ چھوڑدے۔ چوتھی تکبیر رکوع کی ہوگی۔ اس میں ہاتھ نہ اٹھائے۔ سلام کے بعد امام خطبہ پڑھے گا، سامعین متوجہ ہوکر سنیں ۔ خطبہ کے بعد دعا ، مصافحہ اور معانقہ مستحب ہے ۔
{ تکبیـر تـشریق }
مسئلہ۳۶: نویں ذی الحجہ کی فجر سے تیرہویں کی عصر تک جو نماز جماعت کے ساتھ ادا کی گئی ہو ہر نماز کے بعد ایک بار کہنا واجب اور تین بار افضل ہے تکبیر یہ ہے۔ اَللہُ اَکْبَرْاَللہُ اَکْبَرْ،لاَ اِلٰہَ اِلَّا اللہُ، وَاللہُ اَکْبَرْ،اَللّٰہُ اَکْبَر، وَلِلّٰہِ الْحَمْدْo
{احکامِ عقیقہ}
بچہ پیداہونے کے شکریہ میں ،جو جانور ذبح کیا جاتا ہے، اس کو عقیقہ کہتے ہیں ۔ عقیقہ مباح ومستحب ہے، نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے خود عقیقہ کیا ہے، اور اس کی احادیث میں بڑی فضیلت آئی ہے ۔
{احادیث وآثار}
حدیث۱: حضرت سلمان بن عامرضبی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی علیہ وسلم نے فرمایا لڑکے کے ساتھ عقیقہ ہے اس کی طرف سے خون بہاؤ(یعنی جانوذبح کرو)۔ (بخاری)
حدیث۲: حضرت ام کرز رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا لڑکے کی طرف سے دوبکریاں ، اور لڑکی کی طرف سے ایک۔ اس میں حرج نہیں کہ نرہوں یا مادہ ۔
(ابوداؤد ، ترمذی ، نسائی)
حد یث۳: حضرت سمرہ بن جندب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا لڑکا اپنے عقیقہ میں گروی ہے۔ ساتویں دن اس کی طرف سے جانور ذبح کیا جائے اور اس کا نام رکھا جائے اور سر مونڈاجائے ۔
(ابوداؤد ، ترمذی ، نسائی )
گروی ہونے کا مطلب یہ ہے، کہ جب تک عقیقہ نہ کیا جائے، اس سے پورا نفع حاصل نہ ہوگا۔
بعض نے کہا، بچہ کی سلامتی اور اس کی نشو ونما اور اس میں اچھے اوصاف ہونا، عقیقہ کے ساتھ وابستہ ہیں ۔
حدیث۴: حضرت بریدہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ فرماتے ہیں۔ زمانہ ٔ جاہلیت میں، جب ہم میں سے کسی کے بچہ پیدا ہوتا، تو بکری ذبح کرتا اور اس کا خون بچے کے سر پر مل دیتا۔ اب جبکہ اسلام آیا تو ہم ساتویں دن بکری ذبح کرتے ہیں اور بچہ کا سر منڈاتے ہیں اور اس پر زعفران لگاتے ہیں۔ (ابودؤد)
حدیث۵: حضرت ابورافع رضی اللہ عنہ سے روایت ہے جب حضرت امام حسن بن علی رضی اللہ عنہما پیدا ہوئے، تو میں نے دیکھا کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کے کانوں میں وہی اذان کہی جو نماز کے لیے کہی جاتی ہے ۔ (ابوداؤد ، ترمذی)
{چند فقہی مسائل}
مسئلہ۱ : عقیقہ کے لیے ساتواں دن بہتر ہے، اور ساتویں دن نہ کرسکے تو جب چاہے کرسکتا ہے ۔ سنت ادا ہوجائے گی۔
مسئلہ۲: زندگی میں جب بھی عقیقہ کرے تو ساتویں دن کا لحاظ کرنا بہتر ہے۔ اس کا آسان طریقہ یہ ہے کہ بچہ کے پیدائش کے دن کو یاد رکھیں اور جب بھی عقیقہ کرنا ہو اس سے ایک دن پہلے کریں ۔ مثلاً جمعہ کو کوئی بچہ پیدا ہوا ہو تو عقیقہ جمعرات کو کریں ۔ اس میں ساتویں دن کا حساب ضرور آئے گا۔
مسئلہ۳: عقیقہ کے جانور کی بھی وہی شرطیں ہیں جو قربانی کے جانور کی ہیں۔
مسئلہ۴: لڑکے کے عقیقہ میں بکر ا،اور لڑکی کے عقیقہ میں بکری ذبح کی جائے۔ یعنی لڑکے میں نرَ اور لڑکی میں مادَہ کرنا مناسب ہے ، اگر برعکس کیا جب بھی حرج نہیں۔
مسئلہ۵: بہتر ہے کہ اس کی ہڈی نہ توڑی جائے بلکہ ہڈیوں سے گوشت اتار لیا جائے، یہ بچہ کی سلامتی کی نیک فال ہے ۔ اگر ہڈی توڑدی جب بھی حرج نہیں۔
مسئلہ۶: گوشت کو جس طرح چاہیں پکاسکتے ہیں ۔ لیکن میٹھا پکانا ،بچہ کے اخلاق اچھے ہو نے کی فال نیک ہے ۔
مسئلہ۷ : عقیقہ کا گوشت، بچہ کے ماں، باپ، دادا، دادی، نانا، نانی وغیرہ تمام افراد کھا سکتے ہیں ۔ اور بطور ضیافت، دوست واحباب کو بھی کھلایا جاسکتا ہے ۔
مسئلہ۸ : بعض فقہاء کا یہ بھی کہنا ہے کہ سری، پائے حجام کو اور ایک ران دائی کو دیں۔باقی گوشت کے تین حصے کریں ایک حصہ فقراء کا ، ایک احباب کا اور ایک حصہ گھر والے کھائیں ۔
مسئلہ۹: لڑکے کے عقیقہ میں، دو بکر یوں کی جگہ ایک ہی بکری کسی نے کی تو یہ بھی جائز ہے ۔
مسئلہ۱۰: قربانی کے جانور (گائے ، بھینس وغیرہ) میں عقیقہ کی شرکت ہوسکتی ہے ۔
مسئلہ۱۱: اس کی کھال کا وہی حکم ہے جو قربانی کی کھال کا ہے ۔
{ عقیقہ کا طریقہ}
مسئلہ۱۲: عقیقہ کے جانور کو بائیں پہلو پر اسی طرح لٹا ئیں کہ اس کا رخ قبلہ کی جانب ہو اور ذبح سے پہلے یہ دعا پڑئیں۔
لڑکے کی دعا
اَللّٰھُمَّ ھٰذِہِ الْعَقِیْقَۃُ لِاِبْنِیْ (لڑکے کا نام لیں ) دَمُھَابِدَمِہٖ وَلَحْمُھَا بِلَحْمِہٖ وَعَظْمُھَا بِعَظْمِہٖ وَجِلْدُ ھَا بِجِلْدِہٖ وَشَعْرُ ھَا بِشَعْرِہٖ اَللّٰھُمَّ اجْعَلْھَا فِدَائً لِّابْنِیْ مِنَ الْنَّارo اِنِیّ وَجَّھْتُ وَجْھِیَ لِلَّذِیْ فَطَرَالسَّمٰواتِ وَالارضَ حَنِیْفاًوَّ مَا اَنَا مِنَ الْمُشْرِکِیْنَo اِنَّ صَلاَتِی وَنُسُکِیْ وَ مَحْیَا یَ وَمَمَاتِیْ لِلّٰہِ رَبِّ العٰلَمِیْنَo لاَشَرِیْکَ لَہٗ وَبِذٰلِکَ اُمِرْتُ وَاَنَا مِنَ الْمُسْلِمِیْنَo
لڑکی کی دعا
اَللّٰھُمَّ ھٰذِہِ الْعَقِیْقَۃُ لِبِنْتِیْ (لڑکی کا نام لیں ) دَمُھَابِدَمِھَا وَلَحْمُھَا بِلَحْمِھَا وَعَظْمُھَا بِعَظْمِھَا وَجِلْدُ ھَا بِجِلْدِھَا وَشَعْرُ ھَا بِشَعْرِھَا اَللّٰھُمَّ اجْعَلْھَا فِدَائً لِّبِنْتِیْ مِنَ الْنَّارِo اِنِّیْ وَجَّھْتُ وَجْھِیَ لِلَّذیْ فَطَرَالسَّمٰواتِ وَالارضَ حَنِیْفاًوَّ مَا اَنَا مِنَ الْمُشْرِکِیْنَ o اِنَّ صَلاَتِی وَنُسُکِیْ وَ مَحْیَا یَ وَمَمَاتِیْ لِلّٰہِ رَبِّ العٰلَمِیْنَo لاَشَرِیْکَ لَہٗ وَبِذٰلِکَ اُمِرْتُ وَاَنَا مِنَ الْمُسْلِمِیْنَo
پھر  اَللّٰھُمَّ لَکَ وَمِنْکَ بِسْمِ اللہِ اَللہُ اَکْبَرْ ۔ پڑھ کرتیزی چھری سے ذبح کردیں ۔
نوٹ: عقیقہ کی دعا ،اپنا لڑکا یا لڑکی ہو تو مندرجہ بالا طریقہ پر پڑھیں، لیکن اگر دوسرے کا لڑکا ہو تو خط کشیدہ عبارتوں میں لِ کے بعد اِبْنِی ہٹا کر لڑکے اور اس کے باپ کا نام لے ۔ مثلاً لِعَبْدِ الرَّحْمٰنِ بْنِ عَبْدِالْعَزِیْز اسی طرح دوسرے کی لڑکی ہو تو خط کشیدہ عبارتوں میں لِ کے بعد بِنْتِی ہٹا کر لڑکی اور اس کے باپ کا نام لے۔(مثلاً  لِفَاطِمَۃ بِنْتِ خَالِد ) اس کے علاوہ اور کوئی ترمیم نہیں ہوگی۔
احمد القادری
اَلْاِسْلامی.نیٹ
AL islami.net (AL-ISLAMI)
مآ خذ و مراجع
(۱) قرآن کریم
(۲) کنز الایمان، امام احمد رضا قادری، رحمۃ اللہ علیہ(۱۲۷۲۔۱۳۴۰ھ)
(۳) صحیح بخاری، امام ابو عبداللہ محمد بن اسمعیل بخاری ،رحمۃاللہ علیہ (متوفی۲۵۶ھ)
(۴) صحیح مسلم، امام ابوالحسین مسلم بن حجاج قشیری ،رحمۃاللہ علیہ (متوفی۲۶۱ھ)
(۵) جامع ترمذی، امام ابو عیسی محمد بن عیسی ترمذی ،رحمۃاللہ علیہ (متوفی ۲۷۹ ھ)
(۶) سنن ابو داؤد، امام ابو داؤدسلیمان بن اشعث، رحمۃاللہ علیہ (متوفی۲۷۵ھ)
(۷) سنن نسائی، امام ابو عبدالرحمٰن احمد بن شعیب نسائی، رحمۃاللہ علیہ (متوفی ۳۰۳ھ(
(۸) ابن ماجہ،امام محمدبن یزید ابن ماجہ، رحمۃاللہ علیہ(متوفی ۲۷۳ھ)
(۹) طبرانی، امام حافظ ابو القاسم سلیمان بن احمد ایوب اللخمی الطبرانی ، رحمۃاللہ علیہ (متوفی۳۶۰ھ)
(۱۰) مشکوۃ، شیخ ولی الدین تبریزی ،رحمۃاللہ علیہ( متوفی۷۴۲ھ)
(۱۱) بہار شریعت، صدرالشریعہ،مولانا امجدعلی اعظمی، رحمۃ اللہ علیہ (۱۲۹۶۔۱۳۶۷ھ)
(۱۲) قانونِ شریعت ، شمس العلما ، مولانا قاضی شمس الدین ، جون پوری، رحمۃ اللہ علیہ
(۱۳۲۲ ھ ۔ ۱۴۱۰ ھ)
(۱۳) انوارُالحدیث، فقیہ ملت، مولانا مفتی جلال الدین احمد امجدی ، رحمۃ اللہ علیہ
(۱۳۵۲ ھ۔ ۱۴۲۲ ھ)
مسائل رمضان، احمد القادری

مسائلِ رمضان

یٰاَیُّهَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا كُتِبَ عَلَیْكُمُ الصِّیَامُ ،كَمَا كُتِبَ عَلَى الَّذِیْنَ مِنْ قَبْلِكُمْ لَعَلَّكُمْ تَتَّقُوْنَ ۔
(قرآن کریم، سورہ بقرۃ، آیت 183)

اے ایمان والو! تم پر روزے فرض کئے گئے، جیسے اگلوں پر فرض ہوئے تھے۔ کہ کہیں تمھیں پرہیزگاری ملے (کنزالایمان)

رمضان کی فضیلت

شَهْرُ رَمَضَانَ الَّذِیْ اُنْزِلَ فِیْهِ الْقُرْاٰنُ ،هُدًى لِّلنَّاسِ وَ بَیِّنٰتٍ مِّنَ الْهُدٰى وَ الْفُرْقَانِ-فَمَنْ شَهِدَ مِنْكُمُ الشَّهْرَ فَلْیَصُمْهُ-وَ مَنْ كَانَ مَرِیْضًا اَوْ عَلٰى سَفَرٍ فَعِدَّةٌ مِّنْ اَیَّامٍ اُخَرَ۔
(قرآن کریم، سورہ بقرہ، آیت 185)

ماہِ رمضان جس میں قرآن اُتارا گیا- لوگوں کی ہدایت اور حق و باطل میں جدائی بیان کرنے کے لئے، تو تم میں جو کوئی یہ مہینہ پائے تو اسکا روزہ رکھے، اور جو بیمار یا سفر میں ہو، وہ دوسرے دنوں میں گنتی پوری کرے۔ (کنزالایمان)

رسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایا، جو اس میں نیکی کا کوئی کام کرے، تو ایسا ہے جیسے اور کسی مہینے میں فرض ادا کیا- اور اس میں جس نے فرض ادا کیا ،تو ایسا ہے جیسے اور دنوں میں ستر فرض ادا کئے۔۔۔یہ وہ مہینہ ہے کہ اس کا اول رحمت ہے ،اور اوسط مغفرت ہے، اور اس کا آخر جہنم سے آزادی ہے-
(بیہقی شریف)

روزہ کی فضیلت رسول اللہ ﷺ فرماتے ہیں، آدمی کے ہر نیک کام کا بدلہ، دس سے سات سو گنا تک دیا جاتا ہے- اللہ تعالیٰ نے فرمایا، مگر روزہ ،کہ وہ میرے لئے ہے، اور اس کی جزا میں دوں گا، بندہ اپنی خواہش اور کھانے کو، میری وجہ سے ترک کرتا ہے- روزہ دار کے لئے، دو خوشیاں ہیں، ایک افطار کے وقت اور ایک اپنے رب سے ملنے کے وقت- (بخاری و مسلم)

رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: اگر کسی نے ایک دن نفل روزہ رکھا اور زمین بھر اسے سونا دیا جائے، جب بھی اس کا ثواب پورا نہ ہوگا- اس کا ثواب تو قیامت ہی کے دن ملےگا- (طبرانی)

سحری سحری ضرور کھائے، کیوں کہ احادیث میں اس کی بڑی فضیلت آئی ہے، سرکار دوجہاں ﷺ نے فرمایا- سحری کل کی کل برکت ہے، اسے نہ چھوڑنا اگر چہ ایک گھونٹ پانی ہی پی لے- کیوں کہ سحری کھانے والوں پر اللہ اور اس کے فرشتے درود بھیجتے ہیں (مسند امام احمد)

لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ اگر کسی وجہ سے سحری کے وقت آنکھ نہ کھلی ، تو اس بہانے سے روزہ چھوڑدے کہ سحری نہیں کھا ئی- یا وقتِ سحر ختم ہونے پر بیدار ہوئے ،جب بھی کھالیا کہ بڑی فضیلت ہے، اس صورت میں تو روزہ ہی نہ ہوگا- بلکہ کچھ نہ کھاِئے اور روزہ کی نیت کرے- کیوں کہ روزہ فرض عین ہے، سحری فرض نہیں-

روزہ کی نیت:

نَوَیتُ اَنْ اَصُوْمَ غَدًا لِلّٰهِ تَعَالیٰ مِنْ فَرَضِ رَمَضَانَ ھٰذَا۔

میں نے نیت کی، کہ اللہ تعالیٰ کے لئے اس رمضان کافرض روزہ، کل رکھوں گا-
روزہ کے لئے نیت کرنا ضروری ہے اگر چہ اپنی زبان یا دل میں، سحری کھانا بھی نیت ہے- اگر رات میں نیت نہیں کی، تو دن میں یوں نیت کرے۔

نَوَیتُ اَن اَصُوْمَ الیَوْمَ لِلّٰهِ تَعَالیٰ مِنْ فَرَضِ رَمَضَانَ ھٰذَا۔

میں نے نیت کی، کہ اللہ تعالیٰ کے لئے آج، رمضان کافرض روزہ رکھوں گا- (بہار شریعت)
دن میں نیت کرنے کا وقت: چاشت (ضحوہ کبری) تک نیت کرسکتا ہے اس کے بعد نہیں۔
افطار حضور اقدس ﷺ فرماتے ہیں، جب تم میں کوئی روزہ افطار کرے تو کھجور یا چھوہارے سے افطار کرے کہ وہ برکت ہے- اور اگر نہ ملے ،تو پانی سے کہ وہ پاک کرنے والا ہے-
(ابو داؤد، ترمذی، ابن ماجہ)

رسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایا، جس نے حلال کھانے یا پانی سے روزہ افطار کرایا ، فرشتے ماہ رمضان کے اوقات میں اس کے کے لٔےاستغفار کرتے ہیں- اور جبرئیل (علیہ الصلوۃوالسلام) شب قدر میں اس کے لٔے استغفار کرتے ہیں (طبرانی کبیر)

افطار کی دعا: حضورنبی اکرم ﷺ افطار کے وقت یہ دعا پڑھتے-

اَللّٰهُمَّ لَکَ صُمْتُ وَ عَلٰی رِزقِکَ اَفطَرْتُ (ابو داؤد، – بہار شریعت، ج ۵ ص ۱۳۱)

اے اللہ! تیرے ہی لئے میں نے روزہ کھا، اور تیرے ہی دۓہوۓرزق پر، میں نے افطار کیا-

مسائلِ ہلال
رویت ہلال: ۔ تمام اسلامی مہینے چاند دیکھنے سے شروع اورچاند دیکھنے پر ختم ہوتے ہیں، اسی طرح رمضان اور عید کا مدار بھی رویت ہلال پر ہے-
نبی اکرمﷺ فرماتےہیں: چاند دیکھ کر روزہ رکھنا شروع کرو اور چاند دیکھ کر افطار (عید)کرو – اور اگر ابر ہو تو شعبان کی گنتی، تیس پوری کرلو- (بخاری و مسلم)

چاند دیکھنے کے بعد کی دعا:

اَللہُ اَکْبَر، اللَّهُمَّ أَهِلَّهُ عَلَيْنَا بِالْيُمْنِ وَالْإِيمَانِ، وَالسَّلَامَةِ وَالْإِسْلَامِ، وَالتَّوْفِيقِ لِمَا تُحِبُّ وَتَرْضَى، رَبِّیْ وَرَبُّکَ اللہُ (یَاھِلَالْ)،(ترمذی، حصن حصین)

اللہ سب سے بڑا ہے- اے اللہ ہم کو، برکت، ایمان، سلامتی اور اسلام کے ساتھ ، چاند دکھا- اور اس چیز کی توفیق کے ساتھ، جسے تو پسند کرتا ہے،اور راضی ہے- (اے چاند!) میرا ،اور تیرا رب اللہ ہے-

مسائلِ زکوۃ
زکوٰۃ ہر مسلمان، عاقل، بالغ، صاحبِ نصاب پر فرض ہے، سال پورا ہوجانے کے بعد، اپنے کل مال کا چالیسواں حصہ یعنی ڈھائی فیصد زکوۃ نکالنا ضروری ہے- چونکہ صاحب ِنصاب کے لئے، سال پورا ہونے سے پہلے زکوۃ نکالنا جائز ہے، اس لئے مسلمان کثرت سے، رمضان ہی میں زکوۃ نکال دیتے ہیں، سال پورا ہونے کا انتظار نہیں کرتے، کیونکہ رمضان میں ثواب، ستر گنابڑھ جاتا ہے-

مقدارِ نصاب
صاحبِ نصاب، وہ شخص ہے جس کے پاس دوسو درہم یعنی ساڑھے باون تولےچاندی، یا بیس مثقال یعنی ساڑھےسات تولے سونا ہو، یا انٹر نیشنل پیمانہ سے، تقریباً 612.41گرام چاندی یا تقریباً 87.48 گرام ، سونا ہو۔
امریکن پیمانہ سے، تقریباً 19.755 اونس چاندی ،یا تقریباً 2.822 اونس سونا ہو۔
یا ان میں سے کسی ایک، اَدنیٰ کی قیمت کا مالک ہو- آج کل ادنی، چاندی ہے، (بوقت تحریر) ساڑھے باون تولے چاندی کی قیمت، تقریبا 300 یو ایس ڈالر بنتے ہیں، یعنی اتنی رقم، کسی کے پاس ہو تو وہ صاحبِ نصاب ہے۔ سونے چاندی کی قیمت، گھٹتی ، بڑھتی رہتی ہے، اس لئے بوقت ضرورت اس کا موجودہ ریٹ معلوم کر لیا جائے۔

مسائلِ عُشُر

وَ اٰتُوْا حَقَّهٗ یَوْمَ حَصَادِهٖ (قرآن کریم ، سورہ انعام 141)

کھیتی کٹنے کے دن اس کا حق ادا کرو۔

حضور اکرم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے فرمایا، کہ ہراس چیز میں جسے زمین نےنکالا،عشر یا نصف عشر ہے، (کنزالعمال)

جو چیز کھیت میں پیدا ہو (جیسے گیہوں، دھان، سبزی، پھل وغیرہ) اگر سینچائی سے پیدا ہو، تو کل پیداوار کا بیسواں حصہ، ورنہ دسواں حصہ زکوۃ نکالنا واجب ہے- اس میں سال پورا ہونے کی شرط نہیں- اگر سال میں کئی بار پیدا ہو، تو ہر مرتبہ عشر نکالنا ہوگا-

فطرہ
حضور اکرم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے فرمایا،بندہ کا روزہ آسمان وزمین کے درمیان معلق رہتاہے، جب تک صدقۂ فطر نہ ادا کرے۔ (بہار شریعت، بحوالہ دیلمی، خطیب، ابن عساکر)
نماز عید سے پہلے پہلے ،ہر صاحبِ نصاب پر، اپنی اور اپنی نابالغ اولاد کی طرف سے، آدھا صاع گیہوں، یا اس کا آٹا، اس کی قیمت ، یا ایک صاع جو، یا کھجور ، یا مُنَقّیٰ ،یااِن میںسے، کسی ایک کی قیمت کا صدقہ کرنا واجب ہے- قیمت دینا افضل ہے

صاع کی مقدار
انٹر نیشنل پیمانہ سے صاع کی مقدار تقریباً 4 کلو 94 گرام ،اور آدھا صاع کی مقدار، تقریباً 2 کلو 47 گرام ہے
امریکن پیمانہ سے صاع کی مقدار، تقریباً 9.016 پو نڈ ، اور آدھا صاع کی مقدار تقریباً 4.508 پونڈ ہے۔
بندہ کا روزہ، آسمان و زمین کے درمیان ،معلق رہتا ہے، جب تک صدقۂ فطر ادا نہ کرے (حدیث)

مصارفِ زکوۃ
اپنی اصل (ماں، باپ، دادا، دادی، نانی وغیرہ) اپنی اولاد (بیٹا، بیٹی، پوتا، پوتی،نوسہ، نواسی وغیرہ) اپنی بیوی یا شوہر اور بنی ہاشم کو زکوۃ نہیں دے سکتے- ان کے علاوہ تمام مسلم غربا و مساکین کو زکوۃ دے سکتے ہیں- ہاں اگر وہ غریب مسلمان، طالبِ علمِ دین ہے، تو دوسروں کی بہ نسبت اس کی امداد کرنا زیادہ فضیلت کا باعث ہے ،کیونکہ اس میں ایک غریب مسلمان کی مدد بھی ہے اور علم دین کی اشاعت بھی-
اسی لئے مسلمان زیادہ تر زکوۃ مدارس اسلامیہ کو بھیج دیتے ہیں- ہاں مدارس میں زکوۃ بھیجتے وقت، پہلےسے مدرسہ کے مہتمم کو اطلاع دیدیں ،کہ یہ مالِ زکوۃ ہے، تاکہ وہ اسے الگ رکھیں، اور مصارفِ زکوۃ میں خرچ کریں-

ترکیب نماز عید یہ دوسری نمازوں ہی کی طرح پڑھی جاتی ہے- بس فرق اتنا ہے ،کہ اس میں واجب عیدالفطر کی نیت ہوگی، پہلی رکعت میں ثنا کے بعد تین زائد تکبیریں اور دوسری میں رکوع سے پہلے تین
زائد تکبیریں کہی جائیں گی- اِس میں اقامت نہیں، نماز کے بعد خطبہ ہوگا، اس کے بعد دعا، پھر مصافحہ و معانقہ وغیرہ اظہار مسرت کے لئے جائز مستحسن ہے-
(ماخوذ از بہارشریعت وغیرہ ملخصاً)

احمدالقادری مصباحی
اسلامک اکیڈمی آف امریکہ

اَلْاِسْلامی.نیٹ
AL islami.net (AL-ISLAMI)
مینو